Home Blog

پروگرام کے بجٹ کا تخمینہ

0
پروگرام کے بجٹ کا تخمینہ
کسی بھی پروگرام کا تصور ملنے کے بعد پروڈیوسر کو اس پروگرام پر پرخرچ ہونے والی رقم کا تخمینہ کرنا ہوتا ہے چاہے یہ بالکل نیا پروگرام ہو یا پھر گزشتہ سہ ماہی کا پروگرام یا آئندہ سال میں بھی جاری رہے۔

پروگرام کے بجٹ کا تخمینہ

کسی بھی پروگرام کا تصور ملنے کے بعد پروڈیوسر کو اس پروگرام پر پرخرچ ہونے والی رقم کا تخمینہ کرنا ہوتا ہے چاہے یہ بالکل نیا پروگرام ہو یا پھر گزشتہ سہ ماہی کا پروگرام یا آئندہ سال میں بھی جاری رہے۔

ایک خاص فارم پر پروگرام کے بجٹ کا تخمیہ تیار کیا جاتا ہےاور ریڈ کارڈ سے مدد لے کر اس کوبڑا جاتا ہے۔۔

 

پروگرام کے بجٹ کا تخمینہ
کسی بھی پروگرام کا تصور ملنے کے بعد پروڈیوسر کو اس پروگرام پر پرخرچ ہونے والی رقم کا تخمینہ کرنا ہوتا ہے چاہے یہ بالکل نیا پروگرام ہو یا پھر گزشتہ سہ ماہی کا پروگرام یا آئندہ سال میں بھی جاری رہے۔

پروگرام کے بجٹ کی تفصیلات

بجٹ کا تخمینہ لگاتے وقت پروگرام کو جو چیزیں فارم پر کرنا ہوتی ہیں ان کی تفصیل کچھ اس طرح ہے۔

عنوان

پروگرام کا نام سیریز ہے یا سیریل یا اکیلا پروگرام ہے۔

پروڈیوسر

اگر ایک یا ایک سے زیادہ پروڈیوسر کوئی پروگرام پیش کرنے کے ذمہ دار ہوں تو ان سب کے نام لکھے جائیں گے ۔

تعداد

کل کتنے پروگرام ہوں گے یا کتنی قسطیں ہوگی ؟

دورانیہ

پروگرام کا دورانیہ کیا ہوگا یعنی پچاس منٹ 45 منٹ یا ایک گھنٹہ وغیرہ ۔

نشر کرنے کا طریقہ 

ویڈیو ریکارڈ ہوگا براہ راست نشر ہوگا یا فلم پارٹی کو ہوگا ۔

تاریخ اختتام

ریکارڈنگ کب تک ختم ہو جائے گی ۔ گی گیعام طور پر پروڈیوسر یہ احتتام کی قطعی کتنی تاریخ نہیں لکھتا یا اوپن لکھتا ہے کہ فلاں ۔ہفتے تک ریکارڈنگ ختم ہو جائے گی۔

ٹی وی اسٹیشن

 اس بات کا اندراج کرتا ہے کہ پروگرام کسی ٹیلی ویژن اسٹیشن سے پیش کیا جا رہا ہے جیسے پاکستان ٹیلی ویژن کا مسئلہ ہوتو لاہور کراچی کوئٹہ پشاور یا اسلام آباد اسٹیشن لکھا جائےگا ۔

جن ہفتوں کو پروگرام نشر ہوگا

ہفتوں کے نمبر لکھے جائیں گے کہ سماحی کے کون کون سے ہفتوںمیں پروگرام نشر ہوگا۔

کوڈ نمبر

کوڈ نمبرالاٹ کردیا جاتا ہے بجٹ کےتخمینہ پر لکھا جاتا ہے یہ کوڈ نمبر سٹیشن کے نام کے پہلے حرف ہر سال اور پروگرام کے سیریز نمبر کو ملا کر بنایا جاتا ہے جیسے1988 ایل۔

 ریہرسل فیس 

مکمل تفصیل کے ساتھ بجٹ میں لکھیں کے کتنے لوگ کتنے ریہرسل کریں گے ۔

سفیروغیرہ کے اخراجات

اگر کوئی گاڑی کرایہ پر لینے پڑے گی تو اس کے پٹرول وغیرہ کے اخراجات اس میں آئیں گے عملے ا ور پروگرام کے شرکاء کے کھانے کے اخراجات بھی شامل ہونگے۔

انعامات

اگر پروگرام میں آپ کسی قسم کے انعامات دینا چاہتے ہیں تو یہ درج کریں گے کہ انعامات کس شکل میں ہوں گے اور ان پر کیا ہر جائے گا۔

وارڈ روب

پروگرام کے لیے کس قسم کے کپڑے درکار ہوں گے آیا ملبوسات خریدنا پڑیں گے یا کرائے پر لینا ہوں گے ہر صورت میں کتنے پیسے درکار ہوں گے خریدے گئے کپڑے وارڈروب میں جمع ہوں گے۔

پراپس

وہ اشیاء جو شخص پر یا شرکاء کے استعمال کے لیے پروگرام میں درکار ہوگی خریدی جائیں گی یا کرائے پڑھی جائیں گی کتنے پیسے درکار ہوں گے خریدی گئی اشیاء استعمال کے بعد پراپس کے شعبے میں جمع ہوگی۔

ساکت عکاسی

آپ پروگرام کے فوٹوگراف بنانا چاہیں گے اس صورت میں فلم رول اس پر کیالاگت آئے گا ۔

فلم

اگر آپ فلم کیا کر رہے ہیں تو کتنی اور کس قسم کی فلم درکار ہوگی اس کے دھونے میں کی اخراجات آئیں گے یعنی ڈویلپنگ اور پینٹنگ وغیرہ کے اخراجات اس کے علاوہ بجٹ میں دو طرح کے اخراجات کا تخمینہ پیش کیا جاتا ہے ہے ۔

بلاواسطہ اخراجات 

بالواسطہ اخراجات

اونیر پروگرام

0
اونیر پروگرام
پروگرام کی ریکارڈنگ نیا پروگرام کے نشر ہونے سے پہلے ہدایتکار پروڈیوسر اپنے معاون سے کہے کہ اسٹوڈیو سے متعلق تمام عمل کو مسترد کردیں گے جیسے ٹی وی کی زبان میں سٹینڈ بائی کہا جاتا ہے۔

اونیر پروگرام

پروگرام کی ریکارڈنگ نیا پروگرام کے نشر ہونے سے پہلے ہدایتکار پروڈیوسر اپنے معاون سے کہے کہ اسٹوڈیو سے متعلق تمام عمل کو مسترد کردیں گے جیسے ٹی وی کی زبان میں سٹینڈ بائی کہا جاتا ہے۔

 

اونیر پروگرام
پروگرام کی ریکارڈنگ نیا پروگرام کے نشر ہونے سے پہلے ہدایتکار پروڈیوسر اپنے معاون سے کہے کہ اسٹوڈیو سے متعلق تمام عمل کو مسترد کردیں گے جیسے ٹی وی کی زبان میں سٹینڈ بائی کہا جاتا ہے۔

اسٹوڈیو کا عملہ                  کیمروں کی تعداد کے لحاظ سے معاون کیمرہ مین

ایک سٹوڈیو مینیجر         ایک سینئر مینیجر

ایک سینئر مینیجر                کیمروں کی تعداد کے لحاظ سے کیمرا مین

دو یا تین بوم آپریٹر                     ایک وین مکسر

ایک انجینئر برائے آواز                       دو الیکٹریشن

تین سٹوڈیو ہینڈز                       دو پروپٹی معاون 

پروجیکشن عمل                      ایک پنشن آپریٹر 

ایک فلور مینیجر                     میک اپ آرٹسٹ 

ایک روشنی انجینئر

اوپر درج شدہ عملے کے اکثر افراد کے اکثر افراد سٹوڈیو میں ہوتے ہیں جبکہ پروڈیوسر اور اس کا عملہ کنٹرول روم یا کنٹرول گیلری میں ہوتا ہے انجینئرز کے ساتھ کنٹرول روم میں ہوتا ہے پروڈیوسر نے اسکرپٹ اور ہوتی ہے ہوتے ہیں۔

  دوران پروگرام سہولیات

پروگرام کے درمیان جن صورتوں کی ضرورت پڑتی ہے وہ درج ذیل ہیں۔ 

صوتی اثرات

بصری اثرات 

موسیقی

آؤٹ ڈورریکارڈنگ کا وہ حصہ جو اب پروگرام میں شامل کرنا ہے۔

ٹیلی سائنس سلسلہ جہاں سے مختلف کارڈ یا فلم کو پروگرام میں شامل کرنا ہوتا ہے یہ تمام سہولتیں ڈیفلٹر ریکارڈ پلیئر کیسٹوں سی اور پولیس ان کے ذریعے حاصل کی جاتی ہیں پروڈیوسر کا تمام عملے کے ساتھ ہیڈ فون اور انٹر کام کے ذریعے رابطہ ہوتا ہے پروڈیوسر کے سامنے مختلف مونیٹر لگے ہوتے ہیں جن پر نظر آنے والی تصویر کی تفصیل اس طرح ہوتی ہے۔ 

ہر کیمرا الگ میٹر پر نظر آتا ہے یعنی اگر تین کیمرے استعمال ہو رہے ہیں دو تین مونیٹر کے آمروں کے ہوں گے۔ 

ایک مونیٹر ٹیلی سائنس سے منسلک ہوتا ہے۔

ایک دیگر وی سی آر سے جہاں سے کوئی ریکارڈنگ پروگرام میں شامل کرنا مقصود ہو۔ 

ایک آخری بنڈر جس پر وہ تصویر آرہی ہوتی ہے جوانید جا رہی ہوں یعنی کارڈ ہو رہی ہو۔ 

ایک ٹیلی ویژن سیٹنگ جس پر وہ نشریات آرہی ہوتی ہے جنہیں لوگ گھر میں بیٹھے دیکھ رہے ہوتے ہیں۔ 

خبروں کی صورت میں دوسرے شہروں سے منسلک مونیٹر ہر زیادہ تعداد میں ہوتے ہیں مثال کے طور پر پاکستان ٹیلی ویژن کی خبریں اسلام آباد اسٹیشن سے نشر کی جاتی ہیں تو چار میٹر ہوں گے جن پر کوئٹہ کراچی لاہور اور پشاور نظر آرہا ہوگا۔

کیمروں کا استعمال 

مثال کے طور پر اگر تین کیمرے استعمال ہو رہے ہیں تو پروڈیوسر ہر کیمرے کو اس کا شارٹ دیتا ہے پروگرام کے ٹائٹل کے بعد پروڈیوسر پہلا کیمرہ کٹتا ہے اور ساتھ ہی مائیکرو فون اون کر دیا جاتا ہے دوسرے دونوں کیمرے اپنے اپنے شارٹ بنا کر تیار ہوتے ہیں جو ہیں پہلے کیمرے کا منظر یا مکالمہ ختم ہوتا ہے تو پروڈیوسر دوسرا کیمرہ ٹکٹ کرتا ہے اور پہلے کیمرے کو چاٹ جاتا ہے کمرے کے بعد درکار ہوتا ہے یا دوسرے کیمرے کے بعد درکار ہوتا ہے یا دوسرے کمرے کے بعد وہ پھر پہلے کیمرے کو کٹ کر سکتا ہے۔

اسلامی دنیا پر ٹی وی کے اثرات

0
اسلامی دنیا پر ٹی وی کے اثرات
ٹیلی ویژن اسلامی دنیا پر بہت گہرے اثرات مرتب کیے ہیں کیونکہ یہ منفرد انداز کے حامل ہیں ان اثرات کو ہم ایک عجیب و غریب اور منفرد آئینے میں دیکھ سکتے ہیں ٹیلی ویژن

اسلامی ممالک میں ٹیلی ویژن نوعیت اور کردار کے حوالے سے سے بہتر ہے

اسلامی دنیا پر ٹی وی کے اثرات

ٹیلی ویژن اسلامی دنیا پر بہت گہرے اثرات مرتب کیے ہیں کیونکہ یہ منفرد انداز کے حامل ہیں ان اثرات کو ہم ایک عجیب و غریب اور منفرد آئینے میں دیکھ سکتے ہیں ٹیلی ویژن کی ساخت اسلامی دنیا میں اشتراکی ممالک اور مغربی ممالک کا آمیزہ نظر آتی ہے کیونکہ دنیا بھر میں مسلم ممالک میں کہیں فوجی حکومتیں ہیں موروثی بادشاہت یک جماعتی حکومتی اور کہیں برائے نام جمہوری حکومتیں. وزارت اطلاعات و نشریات کے ماتحت ٹیلی ویژن کی مشینری مکمل طور پر حکومت وقت کی ثناخوانی اور امداد میں مصروف رہتی ہے مالک کی طرح مل کر سے جاری ہونے والی پالیسی پر من و عن عمل کل کار آمد ہوتا ہے ہے اس کے نتیجے کے طور پر لوگوں کا اعتماد سرکاری ٹیلی وژن پر نہیں رہا حکمران ان وقت تحقیق کی حیثیت ملک کے اعلی ترین ادارے یعنی فیصلہ کل اور انقلابی قوت جیسی ہے اس میں ٹیلی ویژن کے اس ماڈل کا دوسرا پہلو بھی اتنا ہی عجیب و غریب اور دلچسپ ہے اسلامی ممالک میں معاملہ پیشکش کا ہو نفس مضمون کا یارو مشینری کا ہر لحاظ سے مسلم دنیا کا ٹیلی ویژن امریکہ اور مغربی ممالک پر ناصر انحصار کرتا ہے بلکہ مکمل طور پر ان کی پیروی کرتا ہے۔

 

اسلامی دنیا پر ٹی وی کے اثرات
ٹیلی ویژن اسلامی دنیا پر بہت گہرے اثرات مرتب کیے ہیں کیونکہ یہ منفرد انداز کے حامل ہیں ان اثرات کو ہم ایک عجیب و غریب اور منفرد آئینے میں دیکھ سکتے ہیں ٹیلی ویژن

مختلف شعبوں میں ٹیلی ویژن کے اثرات

سیاسی میدان

اسلامی دنیا کا ٹیلی ویژن سیاسی لحاظ سے عمومی طور پر مغرب اور امریکہ کے ٹیلی ویژن کے اثرات پر منحصر ہے دنیا کے تمام بڑے خبر رساں اداروں اور خبروں پر مشتمل فلمیں بیچنے والے اداروں پر اور دنیا کی ساتویں بڑی خبر رساں ایجنسیوں کا خبروں کے ذرائع پر مکمل کنٹرول ہے ان خبررساں اداروں کے ذریعے اے سے مغربی ممالک اسلامی دنیا کے پورے ڈھانچے کو شکست و ریخت کے عمل سے دو چار کئے رکھتے ہیں ہیں اور سیاسی میدان میں حکومتی ان پر انحصار کرتی ہیں ہیں یہ عوامی میں رائے کو بڑی گہری سوچ کے بعد بدلتے ہیں اگرچہ ٹیلی ویژن کے پروگرام نفس مضمون کے اعتبار سے ایک مخصوص راہ عمل کی طرف رہنمائی کرتے ہیں بلکہ اس کا تعین کرتے ہیں .اور رائے عامہ کو ایک مخصوص دھارے پر تشکیل دیتے ہیں مگر پھر بھی ٹیلی ویژن ایک حدتک ذریعہ اظہار فراہم کر کے سیاسی شعور بیدار کرتا ہے ایک پلیٹ فارم اور ایک فارم فراہم کرتا ہے ٹیلی ویژن کے پروگراموں کے باعث مسلم ممالک کے باشندوں کو دنیا بھر میں رونما ہونے والے واقعات و حادثات سے آگاہی ہوتی ہے اس آگاہی میں کسی حد تک مقبولیت اور معروضیت بھی ہوتی ہے اہم ٹیلی ویژن اسلامی دنیا کے لیے ایک وسیلہ اتحاد فراہم کرتا ہے ٹیلی ویژن کے ذریعے سے دنیا کے کسی بھی گوشے میں بسنے والے مسلمانوں کے حالات زندگی اور ان پر ہونے والے ظلم و تشدد سے نہ صرف آگاہی ہوتی ہے بلکہ ٹیلی ویژن اسلامی دنیا کے ضمیر کو جھنجوڑ کر بیدار ہونے پر بھی مجبور کرتا ہے ہے مکمل تفصیل سامنے آجاتی ہے کہ مسلمان ایک جسم کی طرح ہیں اگر جسم کے کسی حصے میں کوئی تکلیف ہوتی ہے تو پورا جسم متاثر ہوئے بغیر نہیں رہ سکتا۔

بھارت میں مسلم کش فسادات مقبوضہ عرب علاقوں میں اسرائیل کا ظلم ہو وہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ظلم و تشدد یہ کیسی اشتراکی ملک میں مسلمان پریشان حال ہو پوری اسلامی دنیا اس سے متاثر ہوتی ہے ملن کچھ کرے یا نہ کرے مگر آواز ضرور بلند کرتی ہے۔

اس آواز کو فارم انفرادی بھی ہوتا ہے ہے اور اجتماعی بھی ہو اسلامی ممالک کی تنظیم ہو عرب لیگ ہو یا یا عالم اسلام یا کوئی اور ادارہ مثال کے طور پر مقبوضہ عرب علاقوں میں اسرائیل کے فلسطین پر وحشیانہ مظالم سے ہوئے اور انہوں نے لبنان کے فلسطینی کیمپ پر سالہا سال کا محاصرہ ختم کردیا یا یہ محاصرہ اس قدر شدید اور مکمل تھا کہ اس کے نتیجے میں ہزاروں فلسطینی کیمپوں میں بھوک اور افلاس کے باعث مر گئے تھے تھے اور فلسطینیوں نے مجبور ہو کر اسلام کے مطابق حرام شہر یعنی بھائی نے بھائی کا گوشت کھایا استثناء فلپائن کے مسلمانوں پر ظلم و تشدد ہوتا ہے تو ان کی نمائندہ جماعت متحدہ قومی محاذ حکومت کی تنظیم کے ذریعے سعودی حکومت کی خواہش پر سعودی عرب میں معاہدے پر دستخط کرتے ہیں۔

 ہیں سودیت یونین جب ایک مسلمان ملک پاک افغانستان پر فوج کشی کرتا ہے تو پاکستان دنیا بھر میں مہاجرین کی سب سے زیادہ تعداد کو نا صرف بنا دیتا ہے۔ بلکہ ایک سپر طاقت کے سامنے بے سروسامان ہونے کے باوجود حسین اسپورٹ ہو جاتا ہے اور دنیا کی تاریخ میں پہلی مرتبہ واہ سویت یونین کو فوج کشی کے بعد کسی ملک سے فوجوں کے انخلا پر مجبور کردیتا ہے ہے ان چند اور بے شمار دوسری مثالوں سے یہ بات ثابت ہوجاتی ہے کہ ٹیلی ویژن نے سیاسی میدان میں مسلمانوں کے لیے ایک زبردست ذریعہ اتحاد کا موثر کردار ادا کیا ہے۔

ٹی وی ڈاکومنٹری بنانے کے مختلف مراحل

0
ٹی وی ڈاکومنٹری بنانے کے مختلف مراحل
ٹیلی ویژن ڈرامہ محض کسی کہانی کو مکالموں کی صورت میں ادا کر دینے کا نام نہیں روایتی اسٹیج ڈرامے کے برعکس بیوی کی خصوصیات ہیں ٹیلی ویژن ڈرامہ کہانی اداکاری ماحول کیمرہ ورک

ٹی وی ڈاکومنٹری بنانے کے مختلف مراحل 

ٹی وی ڈرامہ

ٹیلی ویژن ڈرامہ محض کسی کہانی کو مکالموں کی صورت میں ادا کر دینے کا نام نہیں روایتی اسٹیج ڈرامے کے برعکس بیوی کی خصوصیات ہیں ٹیلی ویژن ڈرامہ کہانی ی اداکاری ماحول کیمرہ ورک روشنی کے نظام صوتی اثرات اور تدوین پر مشتمل مشترکہ کاوشوں کا ثمر ہے یہ صرف مکالموں پر مشتمل نہیں ہوتا ٹیلی ویژن ڈرامے کے پس منظر میں تین اہم ذرائع نظر آتے ہیں۔

تھیٹر یا سٹیج 

فلم 

ریڈیو

یورپ اور امریکہ میں جب ابتداء میں ٹیلی ویژن مشہور ہوا تو تھیٹر کے ڈرامے مناسب تبدیلیوں کے ساتھ ٹیلی ویژن پر دکھائے جانے لگے بہت سے اداکار مصنف اور ہدایتکار بھی ویڈیو سے ہی ٹیلی ویژن میں داخل ہوئے فلم چونکہ بصری ذریعہ ابلاغ ہے اس ہوئی کی بہت سی اصطلاحات ٹی وی ڈرامے میں مستقل طور پر شامل ہوگی اس کے اثرات کے باوجود ٹیلی ویژن ڈرامہ فلم تھیٹر اور ریڈیو ڈراموں سے واضح طور پر مختلف خصوصیات کا حامل ہے۔

 

ٹی وی ڈاکومنٹری بنانے کے مختلف مراحل
ٹیلی ویژن ڈرامہ محض کسی کہانی کو مکالموں کی صورت میں ادا کر دینے کا نام نہیں روایتی اسٹیج ڈرامے کے برعکس بیوی کی خصوصیات ہیں ٹیلی ویژن ڈرامہ کہانی اداکاری ماحول کیمرہ ورک

ٹی وی ڈرامے کی انفرادیت

فلم بنیادی طور پر بڑی سکرین پر دکھانے کے لئے موزوں ہے لہٰذا اس میں کرداروں کے اردگرد ماحول عمل اور زیادہ نمایاں ہوتے ہیں فلم کے برعکس ٹیلی ویژن ڈرامے میں نا تو بڑے سیٹ ہوتے ہیں اور نہ ہی زیادہ ایکشن ہوتا ہے ٹیلی ویژن ڈرامے میں کردار سازی کہانی اور ڈائیلاگ جاگ زیادہ نمایاں ہوتے ہیں بعض ضد ناقدین انڈین فلم کو ایکشن اور ٹیلی ویژن ڈراموں کو رد عمل کہتے ہیں یعنی ی فلم میں کرداروں کا عمل یا حرکت زیادہ نمایاں ہوتی ہے جبکہ ٹیلی ویژن ڈرامے کے کردار تاثرات یا اداکاری سے زیادہ کام لیتے ہیں ٹیلی ویژن کی سکرین کے مقابلے میں چھوٹی بھی ہوتی ہے اور ناظرین کے قریب بھی لہذا ناظرین تفصیلات تو دیکھنا چاہتے ہیں ہیں جب کہ فلم میں کلوز الغیر معمولی طور پر بڑا دکھائی دیتا ہے ہے لیڈر کے مقابلے میں ٹیلی ویژن ڈرامے کو ایک ہی وقت میں لاکھوں افراد دیکھ سکتے ہیں اس طرح ناظرین کا حل کا بے حد وسیع ہو جاتا ہے ٹی وی ڈرامہ فنی اعتبار سے بھی تھیئٹر کے مقابلے میں میں بہتر انداز سے پیش کیا جا سکتا ہے ۔

ٹی وی ڈرامے کی اقسام

ٹیلی ویژن ڈرامہ قسط وار پیش کیے جاتے ہیں اور بعد مکمل طور پر ایک ہی نشست میں دیکھائیں جاتے ہیں یہ مختلف انداز ٹیلی ویژن کی اپنی اختراع ہیں ۔ٹیلی ویژن ڈرامے کو مندرجہ ذیل نمایاں اقسام میں بانٹا جا سکتا ہے ۔

مکمل ڈرامہ

 سیریز اور سیریل

سوپ اوپرا 

ڈاکومنٹری ڈرامہ 

مکمل ڈرامہ

جیسا کہ نام سے ظاہر ہے مکمل ڈرامہ نہ ایسے ڈرامے کو کہا جاتا ہے جو ایک ہی وقت میں پورے کا پورا ٹیلی کاسٹ کر لیا جائے ایسا کل مکمل کہانی پر مشتمل ہوتا ہے محسن پاکستان 1988 کے دوران ڈرامہ 88 کے عنوان سے ہر مرتبہ ایک مکمل اور علیحدہ ڈرامہ پیش کرتا رہا ہے ۔برطانیہ میں بی بی سی سے اسی نوعیت کے مقبول ڈرامے پلے فور ٹوڈے کے نام سےکئی سال سے نشر ہو رہے ہیں۔

مکمل ڈرامے کی نمایاں خصوصیات

مکمل ڈرامے میں عموما اداکاری پروڈکشن اور تحریر کا معیار ٹیلی ویژن کی عام سیریل یہاں سیریز کے مقابلے میں بہتر ہوتا ہے۔

کہانی عموما چھوٹے موضوع پر مبنی ہوتی ہے۔

ہر ڈرامے میں نئے کردار ہوتے ہیں سلسلہ وار ڈراموں کی طرح یہ کردار مستقل نہیں ہوتے ۔

یہ ڈرامہ مخصوص دورانیوں سے آزاد ہوتے ہیں۔

انڈین ڈراموں کی کامیابی سے ٹیلی ویژن کے اداکار کی ساکھ میں اضافہ ہوا ہے ۔

اس نوعیت کے ڈراموں میں مصنفین اداکار اور پروڈکشن اسٹاف اپنی بھرپور فنی صلاحیتوں کو ظاہر کرتے ہیں ۔

ڈراموں کی پروڈکشن پر نسبتا زیادہ اخراجات ہوتے ہیں کیونکہ یہ سلسلہ وار ڈراموں کے برعکس مکمل ڈرامے کے سیٹ ایک ہی مرتبہ استعمال ہوتی ہیں اسی طرح ملبوسات اور حقیقی مناظر کی عکس بندی پر بھی زیادہ اخراجات اٹھتے ہیں ۔

ڈراموں کی ریہرسل اور پروڈکشن پر نسبتا زیادہ وقت صرف ہوتا ہے ۔

بین الاقوامی منڈی کے تناظر میں دیکھا جائے تو مکمل ڈرامے کی مارکیٹ محدود ہوتی ہے مثلا پی ٹی وی ویر ملکی سیریز یا سیریز تو دکھائی جاتی ہیں لیکن غیر ملکی ٹیلی ویژن ڈرامے نہیں دکھائے جاتے ۔

ترقی یافتہ ٹیلی-ویژن اداروں میں مکمل ڈرامہ ے کو جدید ٹیلی ویژن ڈرامے کی ایسی قسم قرار دیا جاتا ہے جس کے ذریعے متنوع اور اچھوتے خیالات پیش کئے جا سکتے ہیں ۔

ٹیلی ویژن پر نئے ڈرامہ نگار عموما سی صنف کی بدولت متعارف ہوتے ہیں ہیں ۔

مکمل ڈراموں کا فلم کے ساتھ موازنہ کیا جاسکتا ہے ٹیلی ویژن کے مکمل ڈرامے میں ٹی وی اور فلم کی ٹیکنیک باہم مدغم ہو گئی ہے ۔

ڈرامہ سیریز اور سیریل

ڈرامہ سیریز اور سیریل دونوں ٹیلی ویژن کے مقبول پروگراموں میں شامل ہیں ان دونوں میں طویل عرصہ تک کہانیاں پیش کی جاسکتی ہیں اس طرح کے ڈرامے میں نے دیکھتے ہیں پی ٹی وی پر پر سما ہی میں نئی سیریز یا سیریل کا اعلان کیا جاتا ہے سیریز اور سیریل کے کردار مستقل ہوتے ہیں اور ہر ہفتے سامنے آتے ہیں۔

ٹی وی پروڈکشن کے حوالے سے ٹیلنٹ کا انتخاب ریہرسل اور ڈیزائننگ کی وضاحت

0
ٹی وی پروڈکشن کے حوالے سے ٹیلنٹ کا انتخاب ریہرسل اور ڈیزائننگ کی وضاحت
پروڈکشن سکرپٹ یا شوٹنگ سکرپٹ کی تیاری کے بعد ٹیلنٹ کے چناؤ کا مرحلہ آتا ہے ہے لیکن وہ ٹیلی ویژن کمپنی کا تنخواہ دار نہیں ہوتا بلکہ طے شدہ معاہدے پر

ٹی وی پروڈکشن کے حوالے سے ٹیلنٹ کا انتخاب ریہرسل اور ڈیزائننگ کی وضاحت 

مسودے کی تیاری اور پروگرام کی تخلیق کے دوسرے لوازمات

ٹیلی ویژن پروگرام کافارمیٹ فائنل کرنے کے بعد اس کے مسودے کی تیاری ایک اہم مرحلہ ہے جس کے لئے کسی مصنف سے رابطہ کیا جاتا ہے جو کہ متعلقہ پروگرام کے لئے بہتر ہو ۔اگر تحقیقی پروگرام ہے تو کسی محقق کی خدمات حاصل کی جائے  گی بعد ازاں اس پر سکرپٹ لکھا جائے گا ڈرامہ نگار کا نام طے کرنے کے بعد اس کے ساتھ میٹنگ کی جائےگی اور لکھنے کے لیے کہا جائے گا پھرپروڈیوسر کسی بھی پروگرام کی سکرپٹ کو اپنے نقطہ نظر سے پروڈکشن سکرپٹ کی شکل دیتا ہے۔

ٹی وی پروڈکشن کے حوالے سے ٹیلنٹ کا انتخاب ریہرسل اور ڈیزائننگ کی وضاحت
پروڈکشن سکرپٹ یا شوٹنگ سکرپٹ کی تیاری کے بعد ٹیلنٹ کے چناؤ کا مرحلہ آتا ہے ہے لیکن وہ ٹیلی ویژن کمپنی کا تنخواہ دار نہیں ہوتا بلکہ طے شدہ معاہدے پر

ٹیلنٹ کا انتخاب

پروڈکشن سکرپٹ یا شوٹنگ سکرپٹ کی تیاری کے بعد ٹیلنٹ کے چناؤ کا مرحلہ آتا ہے ہے لیکن وہ ٹیلی ویژن کمپنی کا تنخواہ دار نہیں ہوتا بلکہ طے شدہ معاہدے پر اس کی خدمات حاصل کی جاتی ہیں مثال کے طور پر اگر موسیقی کا پروگرام ہے تو سکرپٹ کے انتخاب کے بعد یہ دیکھا جائے گا کہ کون سا گیت نغمہ غزل یا نظم کونسا گلوکار یا گلوکارہ گائیگی کون موسیقار کی دھن بنائے گا پھر موسیقار کے مشورے کے ساتھ یہ طے کیا جاتا ہے کہ اس نغمے میں کون کون سے ساز رکھے جائیں گے نغمہ کے مجموعی تاثرات سامنے رکھتے ہوئے سازوں اور اور سازندوں کا انتخاب عمل میں لایا جاتا ہے اگر دستاویزی پروگرام ہے تو اس کے لئے محقق مسعودہ نویس پس منظر کی موسیقی صوتی اثرات اور آوازکا انتخاب کیا جاتا ہے۔

ریہرسل

ٹیلی ویژن کے کسی بھی قسم کے پروگرام کی کاغذی تیاری بہت ضروری ہے اچھا پروڈیوسر اس بات کا خاص اہتمام کرتا ہے کہ سیٹ پر جانے سے قبل پروڈکشن کے بارے میں ہر چیز کا آغاز پر تحریر ہو اور بہترین فصل ہو چکی ہو۔ 

اگر ہم موسیقی کے پروگرام کی مثال سامنے رکھیں تو موسیقار سازندوں اور نغمہ نگار کے انتخاب کے بعد ریٹس روم میں رسل کی جاتی ہے اور نہ صرف دونوں ترتیب دیتا ہے بلکہ بصری ری ری سری وجہری آہنگ کو ملحوظ رکھتے ہوئے موسیقی کے ٹکڑوں کو بھی ترتیب دیتا ہے پھر تمام موسیقی کو سازندے موسیقی کو اپنے حساب سے یاد کر لیتے ہیں یاد رکھنے کے لیے اسے موسیقی کی زبان میں لکھا جاتا ہے۔

اگر ڈرامہ ہو تو ہر اداکار اس کے حصے کا سکرپٹ تقسیم کر دیا جاتا ہے پہلی ریہرسل میں صرف ڈرامہ پڑھایا جاتا ہے دوسری ریہرسل میں ایک سیریز کے گرد بٹھا کر تمام اداکار اپنے حصے کے مکالمے بولتے ہیں پروڈیوسر جو ڈرامے کا ہدایتکار بھی ہوتا ہے مکالموں کی ادائیگی میں اداکاروں کی مدد کرتا ہے ۔ہر جملے کے زیر و زبر کا خیال رکھتے ہوئے اس بات کا اہتمام کیا جاتا ہے کہ ریہرسل میں پورا سکرپٹ اداکاروں کو زبانی یاد ہوجائے ۔زیادہ سے زیادہ تیسری ریہرسل زبانی کی جانی چاہیے۔

پروگرام کی تیاری کے دوران استعمال ہونے والی اصطلاحات

0
پروگرام کی تیاری کے دوران استعمال ہونے والی اصطلاحات
آخری اور مکمل سکرپٹ ہے جس پر دائیں طرف مکالمے وغیرہ لکھے ہوتے ہیں اور بائیں طرف کیمرہ مین کے لئےشا ٹ کے بارے میں ہدایات ہوتی ہیں اسی کو پروڈکشن سکرٹ بھی کہتے ہیں ۔

پروگرام کی تیاری کے دوران استعمال ہونے والی اصطلاحات 

اصطلاحات

جن سےپروگرام کی تیاری کے دوران واسطہ پڑتا ہے۔

اینگل

ٹی وی میں اینگل سے مراد کیمرے کا زاویہ ہے یعنی وہ طرف جہاں سے کیمرہ موضوع کو دکھائی دیتا ہے ۔

پیش منظر

تصویر کا وہ حصہ جو کیمرے سے قریب ہو ۔

 

پروگرام کی تیاری کے دوران استعمال ہونے والی اصطلاحات
آخری اور مکمل سکرپٹ ہے جس پر دائیں طرف مکالمے وغیرہ لکھے ہوتے ہیں اور بائیں طرف کیمرہ مین کے لئےشا ٹ کے بارے میں ہدایات ہوتی ہیں اسی کو پروڈکشن سکرٹ بھی کہتے ہیں ۔

 بوم 

مچھلی پکڑنے والے راڈ کی طرح جس کے سرے پر مائکروفون بندہ ہوتا ہے اور وہ مائکروفون کو فنکار کے قریب رکھتا ہے لیکن ہمیش شاٹ سے باہر رہتا ہے ۔

بوم آپریٹر

 بوم کو کنٹرول کرنے والے فرد کو بوم آپریٹرکہتے ہیں

کیمرہ مین

وہ شخص جو کمرے سے عکس بندی کرتا ہے۔

کیمرا سکرپٹ

آخری اور مکمل سکرپٹ ہے جس پر دائیں طرف مکالمے وغیرہ لکھے ہوتے ہیں اور بائیں طرف کیمرہ مین کے لئےشا ٹ کے بارے میں ہدایات ہوتی ہیں اسی کو پروڈکشن سکرٹ بھی کہتے ہیں ۔

کلوزاپ

تصویر جس میں کسی فرد کا صرف اپنے سینے سے اوپر تک کا حصہ نظر آرہا ہوں اور اس میں کوئی دوسری تفصیل نہ ہو اسےکلوزاپ شا ٹ بھی کہتے ہیں ۔

کنٹرول روم

وہ کمرہ جہاں سے پروڈیوسر ہدایات کار اپنی پیشکش کو کنٹرول کرتا ہے جہاں بیٹھ کر وہ ہیڈ فون اور انٹر کام کے ذریعے انجینئر اور کیمرہ مینوں کو ہدایت دیتا ہے ۔

کیمرہ کرین

وہ سٹینڈ جس پر کیمرہ اور کیمرہ مین دونوں میں موجود ہوتے ہیں اور جس سے دائیں بائیں اور اوپر نیچے حرکت کرسکتے ہیں اس کا کنٹرول کیمرہ مین کے پاس ہوتا ہے۔

کریڈٹ

پروگرام تیار کرنے والوں اور شرکا کے نام جو پروگرام کے شروع یا آخر میں دیے جاتے ہیں ۔

کیو

اشارہ برائےعمل کسی بھی فن کار کو دیے جانے والا اشارہ ۔کہ وہ اپنا کام شروع کر دے ۔

کٹ

ایک کیمرے سے دوسرے کیمرے کی طرف منتقل ہونا جب منظر کی عکسبندی جاری ہو ۔

 ڈزآلولڈ

اسے مکس بھی کہتے ہیں ایک تصویر کو دوسری تصویر سے ملاتے ہوئے منظروں کو اس طرح بدلنا کے پہلی تصویر یکسر غائب ہو جائے اور دوسری تصویر بتدریج سکرین پر نمایاں ہو جائے ۔

ڈولی

پہیوں والا سٹینڈ جس پر کیمرہ فیکس ہو جائے اور جس کی مدد سے کیمرے کو آگے پیچھے اوپر نیچے حرکت دی جا سکے۔

 آیی لائن 

وہ سمت جس طرح فنکار دیکھ رہا ہوں۔

 ٹوشاٹ

جس فریم میں دو آدمی بالکل ایک جیسے شاٹ میں موجود ہوں یعنی یہ نہ لگے کہ کسی ایک کو نمایاں کیا گیا ہے دونوں بالکل ایک جیسے نمایاں ہوں۔

 فولڈ بیک

موسیقی صوتی اثرات جو کسی بھی طریقے سے بچائے جائیں۔ اور وہ سٹوڈیو میں قابل سماعت ہو تاکہ کہ فن کار سن سکے۔

ہیڈ روم

فنکار کے سر سے لے کر فریم کے اختتام کی جگہ۔

انفرادی شاٹ 

ایک آدمی کی تصویر ۔

فارمیٹ کی تعریف اور تیاری کی وضاحت

0
فارمیٹ کی تعریف اور تیاری کی وضاحت
فارمیٹ کے لغوی معنی ہیں کتاب کی ظاہری شکل و صورت حجم ہیئت جلد بندی کا اسٹائل وغیرہ ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں پروگرام ک ے فارمیٹ سے مراد ٹیلی ویژن پروگرام تیار کرنے کا کوئی مخصوص

  فارمیٹ کی تعریف اور تیاری کی وضاحت 

ابتدائیہ

پروگرام کا فارمیٹ پروگرام کے مزاج اور مواد پر مبنی ہوتا ہے بعض اوقات پروگرام میں کوئی مخصوص ہیئت بھی استعمال کی جا سکتی ہے مثلا خبریں مروجہ طریقے سے ایک مخصوص سیٹ پر ہی نیوز کاسٹر کے ذریعے پیش کی جاتی ہے کرکٹ کا میچ جو کا تو ہی دکھا یا جاتا ہے ۔

 

 

فارمیٹ کی تعریف اور تیاری کی وضاحت
فارمیٹ کے لغوی معنی ہیں کتاب کی ظاہری شکل و صورت حجم ہیئت جلد بندی کا اسٹائل وغیرہ ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں پروگرام ک ے فارمیٹ سے مراد ٹیلی ویژن پروگرام تیار کرنے کا کوئی مخصوص

فارمیٹ کی تعریف

فارمیٹ کے لغوی معنی ہیں کتاب کی ظاہری شکل و صورت حجم ہیئت جلد بندی کا اسٹائل وغیرہ ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں پروگرام ک ے فارمیٹ سے مراد ٹیلی ویژن پروگرام تیار کرنے کا کوئی مخصوص طریقہ اسلوب اور انداز ہے پروگرام کے موضوع مقاصد اور مواد کو پیش نظر رکھ کر ہی اس کا فورمٹ طے کیا جاتا ہے ہے پر جب کسی موضوع پر پروگرام بنایا جائے گا تو اسے کسی نہ کسی فارمیٹ کے تحت تیار کیا جائے گا لہذا کسی ٹیلی ویژن پروگرام کے فارمیٹ  سے مراد ہے کہ کسی پیغام موضوع اور مواد کو کسی خاص انداز سے پیش کرنا ۔

فرض کیجئے کہ حکومت منشیات کے خلاف ٹیلی ویژن کے ذریعے ایک مہم کا آغاز کرتی ہے ٹیلی ویژن پر منشیات کے اثرات اور نتائج پر مبنی مختلف نوعیت کے پروگرام پیش کیے جاسکتے ہیں عین ممکن ہے کہ اس مہم کی خاطر ایک سے زیادہ فارمیٹ اور اصل میں پروگرام تیار کئے جائے۔ یہ پیغام مذاکرے کے ذریعے بھی دیا جاسکتا ہے یا متعلقہ افراد کے انٹرویو میں بھی پیش کیے جاسکتے ہیں ڈرامے میں کہانی اور کرداروں کے ذریعے بھی مسئلے کو سامنے لایا جا سکتا ہے اور دستاویزی پروگرام کے ذریعے حقیقی افراد اور اصل مقامات کو ہے یورپ امریکہ اور دوسرے ممالک کے ٹیلی ویژن ادار طرح پاکستان ٹیلی ویژن کی بنیادی دستاویز میں بھی لوگوں کو تفریح مہیا کرنے معلومات اور تعلیم باہم پہنچانے کی ذمہ داری قبول کرلی گئی ہے ۔

مختلف حوالوں سے پروگرام کی تقسیم

پروگرام اپنےفارمیٹ یا پروڈکشن کے انداز کے لحاظ سے بھی ایک دوسرے سے الگ پہچانے جا سکتے ہیں اور موضوعات کے اعتبار سے بھی مثلا ہم جانتے ہیں کہ ڈرامہ دستاویزی پروگرام یا مذاکرہ ٹیلی ویژن پروگرام کی چند مشہور فارمیٹس ہیں اور یہ فارمیٹ اپنی اپنی خصوصیات کی کی کی بنا پر ایک دوسرے سے علیحدہ پہچانی جاسکتی ہیں لہٰذا ہم فارمیٹس میں تنوع کی بنا پر پروگرام شام کو مختلف اقسام میں بانٹ سکتے ہیں پروگراموں کی مواد یا نفس مضمون کے اعتبار سے بھی مختلف گروپوں میں تقسیم کر سکتے ہیں مثلاً تفریحی پروگرام تعلیمی پروگرام اس کے علاوہ ٹی وی پروگراموں کو ناظرین کے حوالے سے بھی مختلف گروپوں میں تقسیم کیا جاسکتا ہے پروگرام ناظرین کے لئے ہوتے ہیں اور کچھ مخصوص ناظرین کے لیے ۔مذہبی پروگرام تمام ناظرین کے لئے ہیں جبکہ اشاروں کی زبان بچوں کے پروگرام اور گھر بار یعنی خواتین کے پروگرام خاص ناظرین کی خاطر پیش کیے جاتے ہیں ۔

پروگراموں کی گروپ

ٹیلی ویژن پروگراموں کو تین اعتبار سے ایک دوسرے سے الگ کیا جا سکتا ہے۔ 

پروڈکشن کے اعتبار سے پروگراموں کی تقسیم مثلا ڈرامہ مذاکرہ یا دستاویزی پروگرام وغیرہ ۔

 مواد کے اعتبار سے سے پروگراموں کی تقسیم مسلم تفریحی پروگرام معلوماتی پروگرام مذہبی پروگرام اور تعلیمی پروگرام وغیرہ ۔

ناظرین کے اعتبار سے پروگراموں کی تقسیم مثلا عام ناظرین کے لیے پروگرام بچوں کے لیے پروگرام خواتین کے لیے پروگرام طلبا کے لئے پروگرام معذور افراد کے لئے پروگرام اور مقامی زبان میں پروگرام وغیرہ۔

گفتگو کے پروگرام

0
گفتگو کے پروگرام
براہ راست ٹی وی گفتگو سے مراد پروگرام کی ایسی قسم ہے جس میں بولنے والا براہ راست ناظرین سے مخاطب ہوتا ہے ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں ٹی وی کیمرے کے سامنے تقریر کرنے والے ایسے افراد کو بھی کہا جاتا ہے

گفتگو کے پروگرام

ٹیلی ویژن پر بات چیت کے پروگرام جیسا کہ نام سے ظاہر ہے ٹیلی ویژن پروگراموں کے اس فارم کو کہتے ہیں جس میں گفتگو کرنے والے ایک حیا ایک سے زیادہ افراد اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہیں ٹی وی کو کی طرز کی پروگرام کی مختلف صورتیں ہوسکتی ہیں ان میں واحد فرد کی گفتگو انٹرویو مذاکرہ پریس کانفرنس اور حاضرین کے سوال و جواب سے بھی شامل ہیں تو کیا ان تمام اقسام میں شرکا اپنی ذاتی حیثیت سے پیش ہوتے ہیں گفتگو کی کی مندرجہ ذیل قسمیں ہیں ۔

براہ راست بات چیت 

بصری معاونت کی مدد سے بات چیت 

انٹرویو 

مذاکرہ 

براہ راست بات چیت

گفتگو کے پروگرام
براہ راست ٹی وی گفتگو سے مراد پروگرام کی ایسی قسم ہے جس میں بولنے والا براہ راست ناظرین سے مخاطب ہوتا ہے ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں ٹی وی کیمرے کے سامنے تقریر کرنے والے ایسے افراد کو بھی کہا جاتا ہے

 

 

براہ راست ٹی وی گفتگو سے مراد پروگرام کی ایسی قسم ہے جس میں بولنے والا براہ راست ناظرین سے مخاطب ہوتا ہے ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں ٹی وی کیمرے کے سامنے تقریر کرنے والے ایسے افراد کو بھی کہا جاتا ہے

پس منظر

براہ راست گفتگو کے پروگراموں کا فورمیٹ بلکل سادہ ہوتا ہے براہ راست مخاطب ہو کر گفتگو کرنا بھی ابلاغ کا بڑا مؤثر قدیم اور سادہ طریقہ ہے ٹیلی ویژن پر براہ راست گفتگو کا فورمیٹ ریڈیو سے لیا گیا ہے

براہ راست گفتگو کی خصوصیات

اس طرح کے پروگرام میں گفتگو کرنے والے کا ناظرین سے قریب ترین اور براہ راست تعلق ہوتا ہے جسے ایک طرح کا ذاتی تعلق قائم ہو جاتا ہے 

گفتگو اگر سادہ اور روز مرہ بول چال کے الفاظ میں کی جائے تو زیادہ موثر ہوتی ہے ۔

گفتگو کرنے والے کی ذاتی حیثیت یا اس کی شخصیت بھی پروگرام کا حصہ ہوتی ہے ۔

گفتگو کرنے والا جو کہ کیمرے کی طرف دیکھ کر بات کرتا ہے لہٰذا اس سے یوں ظاہر ہوتا ہے گویا ناظرین سے براہ راست مخاطب ہے ۔

بات چیت ایک واضح موضوع پر اور واضح مقاصد کے تحت اور دلائل کے ساتھ کی جاتی ہے ۔

انداز بیان شگفتہ اور دلچسپ ہونا چاہیے گفتگو کرنے والے کے چہرے کے تاثرات بھی ابلاغ میں مدد دیتے ہیں اور دلچسپی ہونی چاہیے ورنہ ناظرین اکتا جائیں گے۔

معاونات کی مدد سے گفتگو

بصری معاونات کے ساتھ گفتگو ٹی وی پروگرام کا ایسا فارمیٹ ہے جس میں گفتگو کرنے والا ماہر تصاویر ماڈل خاکوں اور دوسرے معاونات کی مدد سے کسی موضوع پر معلومات فراہم کرتا ہے بصری معاونات کے ساتھ گفتگو بھیبراہ راست بات چیت کی مانند ایک شخص ناظرین سے براہ راست گفتگو کرتا ہے۔

خصوصیات

یہ فورمٹ معلوماتی اور تعلیمی پروگراموں میں خاص طور پر مقبول اور موثر ثابت ہوتا ہے۔

اخراجات کے لحاظ سے یہ فارمیٹ دوسری معلوماتی پروگرام و مثلا دستاویزی پروگرام کی نسبت بہت سستا ہے

اس قسم کے پروگرام کی پیشکش کے انداز میں کافی لچکدار ہوتی ہے استاد یا ماہر زبانی وضاحت کے ساتھ مختلف امدادی اشیاء بھی استعمال کرتا ہے جو کہ امدادی اشیاء خود ہی کنٹرول کرتا ہے لہذا زبانی وضاحت اور عملی مظاہر کا آپس میں ربط قائم رہتا ہے۔

اسی قسم کا پروگرام عموما اسٹوڈیو کے اندر تیار کیا جاتا ہے اس لئے ایک سادہ سیٹ تیار کیا جاتا ہے مختلف ریہرسل کی ضروریات کے مطابق ترتیب سے رکھ دی جاتی ہیں ۔اور گفتگوکرنے والا ترتیب کے مطابق موضوع کی وضاحت جاری رکھتا ہے پروگرام کی یہ قسم آپ کو علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی یا پی ٹی وی کے تعلیمی پروگرام میں نظر آتی ہے۔

دستاویزی پروگرام

0
دستاویزی پروگرام
ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں دستاویزی پروگرام پروگراموں کے ایسے فارمیٹ کو کہتے ہیں جس میں کسی موضوع کو تحقیق کی میں حقیقی واقعات افراد ماحول اور مقامات کے ساتھ پیش کیا جائے

دستاویزی پروگرام 

اصطلاحی مفہوم

ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں دستاویزی پروگرام پروگراموں کے ایسے فارمیٹ کو کہتے ہیں جس میں کسی موضوع کو تحقیق کی میں حقیقی واقعات افراد ماحول اور مقامات کے ساتھ پیش کیا جائے یہ پروگرام ضروری حقائق پر مبنی ہوتے ہیں اور اس میں حقیقی زندگی پیش کی جاتی ہے۔

لغوی مفہوم

لغوی اعتبار سے لفظ ڈاکومنٹری ایسی دستاویز کو کہتے ہیں جو معلومات اور حقائق فراہم کریں  جو معلومات اور حقائق فراہم کریں پی ٹی وی میں ڈاکومنٹری کےمترادف دستاویزی پروگرام کی اصطلاح استعمال کی جاتی ہے ۔

 

 

دستاویزی پروگرام

ٹیلی ویژن کی اصطلاح میں دستاویزی پروگرام پروگراموں کے ایسے فارمیٹ کو کہتے ہیں جس میں کسی موضوع کو تحقیق کی میں حقیقی واقعات افراد ماحول اور مقامات کے ساتھ پیش کیا جائے

پس منظر

برطانیہ اور امریکہ میں ابتدائی دستاویزی پروگرام کا تعلق حالات حاضرہ سے تھا حالات حاضرہ کے علاوہ دستاویزی پروگرام زندگی کے ہر پہلو پر بنائی جا سکتی ہیں اور یا دستاویزی پروگرام کا تعلق چونکہ حقائق اوراصل زندگیسے ہوتا ہے۔ اس لئے ایسے پروگرام کو حقیقی ٹیلی ویژن بھی کہا جاتا ہے۔ اس لئے ایسے پروگراموں کو حقیقی ٹی وی بھی کہا جاتا ہے۔اس وقت ڈاکومنٹری پروگرام عالمی سطح پر ٹی وی پروگراموں کی ایک مقبول قسم ہے دنیا کے مشہور ٹیلی ویژن ایسے دستاویزی پروگرام تیار کرنے میں ایک دوسرے پر برتری لے جانے کی کوشش کرتے ہیں ۔ہر چینل پر ڈاکومنٹری کی کوئی نہ کوئی سیریس ہمیشہ نشر ہوتی ہے۔ پی ٹی وی تاریخی مقامات مساجد اور شہروں پر مبنی دستاویزی پروگرام نشر کرچکا ہے ۔اور بدستور کر رہا ہے کچھ عرصہ قبل نیشنل جیوگرافک ایک سوسائٹی کی جانب سے ڈاکومنٹری سیریز پاکستان کے ناظرین میں بہت مقبول ہوئی تھی اسی میں پرندوں حیوانات اور جنگلات پر مبنی حقیقی زندگی کے مناظر ہر انداز میں بھرپور تاثر اور تحقیق کے ساتھ دکھائے گئے تھے۔

خصوصیات

ڈاکومینٹری پروگرام مختلف موضوعات پر تیار کیے جا سکتے ہیں جیسے

خبروں اورحالات حاضرہ سے متعلق دستاویزی پروگرام۔ 

اس کے افغانستان میں تسلط کے دوران کیے جانے والے دستاویزی پروگرام یا کسی کسی طیارے کے اغوا کے سلسلے میں آنکھوں دیکھی حال پر مبنی ی براہ راست رپورٹنگ۔۔

خبریں ٹی وی کا اہم حصہ شمار ہوتی ہیں اس کی خصوصیات پر روشنی

0
خبریں ٹی وی کا اہم حصہ شمار ہوتی ہیں اس کی خصوصیات پر روشنی
خبریں پروگراموں کا ایک اہم حصہ ہوتی ہیں اس پروگرام میں مقررہ اوقات پر تازہ ترین خبریں ابو کا تجزیہ اور خصوصی رپورٹ بھی پیش کی جاتی ہے اس پروگرام کے تحت فری ہونے والی تبدیلیوں سے آگاہ رہتے ہیں

خبریں ٹی وی کا اہم حصہ شمار ہوتی ہیں اس کی خصوصیات پر روشنی 

خبریں

خبریں پروگراموں کا ایک اہم حصہ ہوتی ہیں اس پروگرام میں مقررہ اوقات پر تازہ ترین خبریں ابو کا تجزیہ اور خصوصی رپورٹ بھی پیش کی جاتی ہے اس پروگرام کے تحت فری ہونے والی تبدیلیوں سے آگاہ رہتے ہیں ۔

 

خبریں ٹی وی کا اہم حصہ شمار ہوتی ہیں اس کی خصوصیات پر روشنی
خبریں پروگراموں کا ایک اہم حصہ ہوتی ہیں اس پروگرام میں مقررہ اوقات پر تازہ ترین خبریں ابو کا تجزیہ اور خصوصی رپورٹ بھی پیش کی جاتی ہے اس پروگرام کے تحت فری ہونے والی تبدیلیوں سے آگاہ رہتے ہیں

پس منظر 

پروگرام ٹیلی ویژن جرنلزم میں شمار کیا جاتا ہے تاہم ٹیلی ویژن پر خبریں پیش کرنے کا طریقہ ریڈیو ہے لیکن ادارے ان میں کی خبر نام میں نشر کرتے ہیں دنیا بھر میں ٹیلی ویژن کی پیشکش کا اندازکم و بیش یکساں ہوتا ہے۔ پروگرام ٹیلی ویژن کا ایک اہم پروگرام تصور کیا جاتا ہے۔خبروں  کا کامیاب پروگرام ٹی وی چینل کی پہچان بنبن جاتا ہے۔ مثلا پی ٹی وی کا قومی اور بین الاقوامی قبروں پر مشتمل خبرنامہ برطانیہ میں دس بجے کی خبریں اور اسی طرح مختلف چینلز پر کوئی نہ کوئی خبر نامہ ضرور دیکھا جاتا ہے ۔

خبروں کی خصوصیات

پی ٹی وی خبریں واقعات کا محض بیان ہی نہیں بلکہ واقعات کا نوٹس لیں ریکارڈ بھی ہوتی ہیں۔ 

خبروں کا بصری ریکارڈ اس کےمصدقہ ہونے کا ثبوت بھی فراہم کرتا ہے۔ 

بعض خبریں بری بات خبروں یا واکیات کی فلم اتنی موثر ہوتی ہے کہ بات کم سے کم وقت میں واضح طریقے سے ناظرین تک منتقل ہو جاتی ہے جبکہ اسی بات کو ریڈیو اور اخبارات میں زیادہ تفصیل سے بیان کرنا پڑتا ہے ۔

صحافت کی اسلامیہ رہبر کو سٹوری کہا جاتا ہے ٹیلی ویژن کے خبروں کے پروگرام نے کسی ایک خبریں اسٹوری کو مندرجہ ذیل طریقے سے پیش کیا جاتا ہے ۔

نیوز کاسٹر خود اسکرین پر ظاہر ہو کر خبریں پڑھے ۔

نیوز کاسٹر خود سکرین پر خبریں پڑھتے لیکن ساتھ متعلقہ کا منظر دکھایا جائے تصاویر اور نقشے بھی استعمال کیے جائیں ۔

خبر اصل مقام سے براہ راست نشر کی جائے ۔

خبریں واقعات کا غیرجانبدارانہ بیان ہوتی ہیں ایڈیٹر خبریں ترتیب دیتے وقت خبر کے بیان میں اپنی ذاتی رائے شامل نہیں کرتے

نیوز کاسٹر خبریں غیرجانبداری سے پڑھتے ہیں اور اپنے انداز بیاں اور چہرے کے تاثرات کو ظاہر نہیں ہونےدیتے ۔

نیوز ریڈر کے فرائض کا انحصار مختلف ٹیلی ویژن اداروں پر ہوتا ہے امریکا میں بعض چینل پر نیوز ریڈر کسی بھی خبر کو اپنے الفاظ میں بیان کرتا ہے ہے جبکہ خبروں کا بلیٹن دوسرے ایڈیٹر تیار کرتے ہیں ہمارے ہاں میں برطانیہ کی طرح نیوز ریڈر تیار شدہ ہیں ان کی ہوئی خبریں مثبت اور موثر انداز میں پڑھیں گے انہیں کسی خبر میں ردوبدل کرنے کی اجازت ہے یعنی ایڈیٹر اور نیوزریڈر کے فرائض ادا ہوتے ہیں۔

نیوز کاسٹر کےچناؤ میں خصوصی اختیار بڑھتی جاتی ہے۔ بعض نیوز چینل درمیانی عمر کے سنجیدہ افراد جبکہ بعض ادارے خبریں پڑھنے کے لیے خواتین کی بجائے مرد حضرات کو ترجیح دیتے ہیں ہیں تاہم بہتریننیوز کاسٹر کے لئے خواتین شامل ہیں۔